ْپیپلز پارٹی نے نگران وزیر داخلہ اعظم خان کی تقرری کیخلاف ہائیکورٹ میں درخواست دائر کر دی

لاہور; پاکستان پیپلز پارٹی کے راہنما فیصل میر نے نگران وزیر داخلہ اعظم خان کی تقرری کے خلاف لاہور ہائیکورٹ میں درخواست دائر کر دی ۔انہوں نے اپنی درخواست میں الیکشن کمیشن آف پاکستان اور ایف آئی اے کو بھی فریق بنایا ہے۔ فیصل میر نے ظفر چوہدری ایڈووکیٹ کی وساطت سے دائر درخواست میں کہا ہے کہ الیکشن کمیشن کے قوانین کے مطابقنگران The PPP has filed a petition against the appointment of the Interior Minister, Khan Khan, in the High Courtحکومت کے تمام وزراء غیر جانبدار ہونے چاہئیں مگر موجودہ نگران وزیر داخلہ عمران خان فائونڈیشن کے بورڈ آف گورنرز میں شامل ہیں۔اعظم خان نے غیر قانونی طور پر ایف آئی کو استعمال کیا اور عمران خان کے دوست زلفی بخاری کے لیے وزارت داخلہ سے ایک غیر قانونی حکم جاری کروایا۔لہٰذا معزز عدالت سے استدعا ہے کہ نگران وزیرداخلہ کی تقرری کو منسوخ کرنے کہ احکامات جاری کیے جائیں ۔میڈیا سے بات کرتے ہوئے کہا کہ فیصل میر نے کہا کہ عمران خان اسوقت نگران سیٹ اپ کے ذریعے وزیراعظم ناصر الملک سے زیادہ اختیارات استعمال کر رہے ہیں،قانون کے مطابق ایگزیکٹو کنٹرول لسٹ اور بلیک لسٹ سے نام ہٹانے کا اختیار صرف وفاقی کابینہ کا ہے۔جس وقت زلفی بخاری کو پاکستان سے باہر جانے کی اجازت دی گئی اسوقت کابینہ کا کوئی اجلاس نہیں ہوا تھا۔وفاقی وزیر داخلہ اعظم خان وزیر بننے سے پہلے نے عمران خان کے سیکریٹری عون چوہدری کے دفتر میں گھنٹوں بیٹھ کر عمران خان سے ملاقات کا وقت مانگا کرتے تھے۔۔پی ٹی آئی کے کسی ایک شخص کی فون کال پر اعظم خان نے عمران خان کے دوست کے لئے تمام قوانین کی دھجیاں اڑائیں۔ایسے غیر جانبدار شخص کی موجودگی میں غیر جانبدار الیکشن ناممکن ہیں لہٰذا اعظم خان کی بطور وزیر داخلہ تقرری کو منسوخ کرنے کے احکامات جاری کئے جائے۔