پاکستان پیپلز پارٹی کے ترقیاتی کام جو پچھلے 8 سالوں میں مکمل کیے گئے اور جن رکاوٹوں کا سامنا کرنا پڑا، اگر ان میں کوئی منصوبہ نامکمل ہے تو سوشل میڈیا اور تمام میڈیا کے دوست آگاہ کریں

اسلام آباد؍ کراچی ( پی پی سوشل میڈیا گروپ) پیپلز پارٹی دور کے ترقیاتی کاموں کی لسٹ تصدیق کے لیے رکھ رہا ھوں، ان میں سے اگر کوئی منصوبہ نامکمل ھے تو آگاہ کریں۔
پی پی پی کے پچھلے 8 سالوں میں سندھ میں چند بڑے پراجیکٹ……

سندھ میں 10 ہزار بے گھر مکمل تعمیر کے بعد حوالے کئے گئے ہیں۔اور پچاس ہزار پلاٹ مفت بانٹے جا رہے ہیں۔
ہزاروں کسانوں کو قسطوں پر ٹریکٹرز دئے گئے اور کسانوں کو ہر ٹریکٹر پر دو سے تین لاکھ فی کس سبسڈی دی گئی۔
کراچی۔۔ نواب شاہ۔۔ سکھر اور جامشورو میں ریجنل بلڈ سینٹرز کا قیام عمل میں لایا گیا۔۔ جن میں دو لاکھ بلڈ بیگز کی گنجائش ہے
لیاری ڈگری کالجز کا قیام
ٹنڈوالہ یار میں ملٹی پرپز اسپورٹس ہال کی تعمیر
نواب شاہ میں شہید بے نظیر بھٹو یونی ورسٹی کا قیام
لاڑکانہ میں شہید بے نظیر بھٹو یونیورسٹی کا قیام
ٹنڈوجام محمد میں بے نظیر بھٹو کارڈیک کئیر اسپتال کا قیام
لاڑکانہ میں کارڈیو ویسکولر ڈیزز کے علاج کے لیے مفت اسپتال کا قیام
َسیہون شریف میں کارڈیو دل بڑا ہاسپٹل
دادو میں ہاکی کا اسٹیڈیم
دادو پیر الاہی بخش لا کالج
کراچی میں شہید منور حسین سہروردی انڈرپاس کی تعمیر
لیاقت میڈیکل یونیورسٹی میں ڈینٹل ٹیچنگ یونٹ کا قیام
کراچی میں پاکستان کے پہلے آٹزم سینٹر کا قیام
کراچی میں پاکستان کے پہلے ریپ سے متاثرہ خواتین کی بحالی کے سینٹر کا قیام
کے ٹی بندر پر 1320 میگاپاور پلانٹ کا منصوبہ تعمیر ہورہا ہے
دراوت ڈیم کی تعمیر…اس ڈیم کی تکمیل سے 50،000 ایکڑ زمین پر آبپاشی مممکن ہو گی اور سندھ کے دور دراز علاقوں میں سماجی-اقتصادی ترقی آئے گی. یہ ڈیم 9300 ملین روپے کی لاگت سے تعمیر کیا جا رہا ہے جو کہ سیلابی پانی کا 121،600 ایکڑ فٹ ذخیرہ کرے گا 820 فٹ طویل اور 141 فٹ اونچے ڈیم کی تعمیر کے دوران 4،500 افراد کو روزگار کے مواقع ملے گا..
تھر اسلام کوٹ میں ائیرپورٹ کا افتتاح
تھر میں پینے کے صاف پانی کےفراھمی کیلئے 6 ROپلانٹ کی تنصیب جس سے روزانہ 150′دیہات کے 3 لاکھ افراد کو صاف پانی مہیا کیا جاتا ہے.
شارع فیصل، یونیورسٹی روڈ اور طارق روڈ کراچی کی تعمیر
ٹھٹہ اور ٹنڈومحمد خان کو جوڑنے والا جھرک ملاکٹیار میں پاکستان کے سب سے بڑے پونے دوکلومیٹر طویل پل کی تعمیر
نوری آباد پر سومیگاواٹ کے گیس فائر پاور پلانٹ کی تکمیل
کراچی کے جناح اسپتال میں بارہ منزلہ کینسر کے علاج کا مرکز تعمیر کیا جارہا ہے۔۔ علاج بالکل مفت ہوگا
لاڑکانہ میں دل کے امراض کے علاج کے سینٹر کا قیام
سندھ کے چھ کروڑ باشندوں کو جب کوئی حادثہ ہوتا ہے تو خدانخواستہ کسی معذوری یا جان جانے کی صورت میں سندھ حکومت متاثرین کو معاوضہ ادا کرتی ہے۔۔ سندھ میں رہنے والوں کی انشورنس ہے
نواب شاہ میں پاکستان کے پہلے بختاور کیڈٹ کالج کا قیام
ٹھٹہ اور سجاول کے اضلاع کے لیے پیپلزایمبولینس سروس کا قیام
کراچی سرکلر ریلوے پر کام کا آغاز
ٹھٹہ سجاول روڈ پر ایک کلومیٹر طویل فورلین پل کی ریکارڈ مدت میں تعمیر
کراچی کے دواضلاع میں چینی کمپنی کو صفائی کے کام کا ٹھیکہ
لاڑکانہ میں ماڈل اسکول کیڈٹ کالج کا قیام
لاڑکانہ میں گرلز ڈگری کالج کا قیام
لاڑکانہ میں شہید بے نظیر بھٹو لا کالج کا قیام
لاڑکانہ میں گڑھی خدا بخش اسٹیڈیم کا قیام
لاڑکانہ میں ذوالفقارعلی بھٹو ایگری کلچر کالج کا قیام
لاڑکانہ میں قائدعوام انجینرئنگ یونی ورسٹی
لاڑکانہ میں نرسنگ ہاسٹل کا قیام
لاڑکانہ میں شہید شاہ نوازبھٹو لائبریری کا قیام
نوڈیرو میں بے نظیر بھٹو گرلز ڈگری کالج کا قیام
لاڑکانہ میں ٹیکنالوجی کالج کا قیام
لاڑکانہ میں شیرین امیر بیگم بھٹو فلای اور کی تعمیر.
کراچی میں پبلک پرائیوٹ پارٹنرشپ سے کلفٹن فلائی اوور کی تعمیر
بی بی آصفہ ڈینٹل کالج لاڑکانہ
سکھر میں200بیڈ پے مشتمل بینظیرشھید سرجیکل ھسپتال کی تعمیر
سومیگاواٹ تک کے تھر کول پاور پلانٹ کا آغاز
سندھ میں بجلی کی پیداوار کے لیے سات ونڈپاورٹربائن کی تعمیر کی گئی ہے۔۔
سندھ میں انٹرنیٹ پر ٹیکس ختم کردیا گیا۔۔ پہلے یہ ٹیکس ساڑھے انیس فیصد تک تھا
تھر میں موبائل اسپتال کا قیام۔۔
تھر میں چھ لاکھ سے زائد سیاحوں کی ساون میں آمد
کراچی میں جنوبی ایشیا کے سب سے بڑے پانچ سو بستروں اور اٹھارہ آپریشن تھیٹرز پر مشتمل سینٹرلی ائیرکنڈیشنڈ بے نظیر بھٹو ٹراما سینٹر کا قیام
کراچی کے ضلع ملیر میں آئی ٹی سٹی بن رہا ہے
کراچی میں وفاق کے تعاون سے گرین لائن جبکہ بلیو۔۔ گرین۔۔ ریڈ اور ایدھی لائنز کی تعمیر جاری ہے
سندھ میں بجلی کی ترسیل کے لیے سرکاری ٹرانسمیشن اینڈ ڈسپیچ کمپنی کا قیام۔۔۔

کراچی میں 38 کلومیٹر لیاری ایکسپریس وے کی تعمیر
کراچی سے بلوچستان براستہ گوادر ایکسپریس وے کی تعمیر
کراچی کو پینے ک صاف پانی کی فراہمی کے منصوبوں کا کام
پرایمری سے سیکنڈری سکول تک مفت تعلیم
تھر کے عوام کو تھرکول پراجیکٹ کی سالانہ ایک لاکھ کے شیر کی فراھمی
تھر میں خواتین کو با عزت روزگار ک ذرایع فراہم کرنے ک سلسلے میں وزیر اعلی مراد علی شاہ کے خصوصی ھدایت پے تھر کول پراجیکٹ میں ٹرانسپورٹ اور لاجسٹک میں تھر کے خواتین کو بطور ڈرایئور تعیناتی…
سکھر میں آرٹس اینڈ ڈیزائننگ کالج کا قیام
سیہون شریف میں کارپٹ روڈز اور سولر لایٹ کی تنصیب.
جدید سندھ کی تعمیر ۔۔ایک عزم بینظیر ۔۔۔جیے پاکستان پیپلز پارٹی ۔جیے عوامی حکومت
منجانب:جان محمد پہوڑ سیکریٹری انفارمیشن
پی پی پی تعلقہ جوہیپی پی پی کے پچھلے 8 سالوں میں سندھ میں چند بڑے پراجیکٹ……

سندھ میں 10 ہزار بے گھر مکمل تعمیر کے بعد حوالے کئے گئے ہیں۔اور پچاس ہزار پلاٹ مفت بانٹے جا رہے ہیں۔
ہزاروں کسانوں کو قسطوں پر ٹریکٹرز دئے گئے اور کسانوں کو ہر ٹریکٹر پر دو سے تین لاکھ فی کس سبسڈی دی گئی۔
کراچی۔۔ نواب شاہ۔۔ سکھر اور جامشورو میں ریجنل بلڈ سینٹرز کا قیام عمل میں لایا گیا۔۔ جن میں دو لاکھ بلڈ بیگز کی گنجائش ہے
لیاری ڈگری کالجز کا قیام
ٹنڈوالہ یار میں ملٹی پرپز اسپورٹس ہال کی تعمیر
نواب شاہ میں شہید بے نظیر بھٹو یونی ورسٹی کا قیام
لاڑکانہ میں شہید بے نظیر بھٹو یونیورسٹی کا قیام
ٹنڈوجام محمد میں بے نظیر بھٹو کارڈیک کئیر اسپتال کا قیام
لاڑکانہ میں کارڈیو ویسکولر ڈیزز کے علاج کے لیے مفت اسپتال کا قیام
َسیہون شریف میں کارڈیو دل بڑا ہاسپٹل
دادو میں ہاکی کا اسٹیڈیم
دادو پیر الاہی بخش لا کالج
کراچی میں شہید منور حسین سہروردی انڈرپاس کی تعمیر
لیاقت میڈیکل یونیورسٹی میں ڈینٹل ٹیچنگ یونٹ کا قیام
کراچی میں پاکستان کے پہلے آٹزم سینٹر کا قیام
کراچی میں پاکستان کے پہلے ریپ سے متاثرہ خواتین کی بحالی کے سینٹر کا قیام
کے ٹی بندر پر 1320 میگاپاور پلانٹ کا منصوبہ تعمیر ہورہا ہے
دراوت ڈیم کی تعمیر…اس ڈیم کی تکمیل سے 50،000 ایکڑ زمین پر آبپاشی مممکن ہو گی اور سندھ کے دور دراز علاقوں میں سماجی-اقتصادی ترقی آئے گی. یہ ڈیم 9300 ملین روپے کی لاگت سے تعمیر کیا جا رہا ہے جو کہ سیلابی پانی کا 121،600 ایکڑ فٹ ذخیرہ کرے گا 820 فٹ طویل اور 141 فٹ اونچے ڈیم کی تعمیر کے دوران 4،500 افراد کو روزگار کے مواقع ملے گا..
تھر اسلام کوٹ میں ائیرپورٹ کا افتتاح
تھر میں پینے کے صاف پانی کےفراھمی کیلئے 6 ROپلانٹ کی تنصیب جس سے روزانہ 150′دیہات کے 3 لاکھ افراد کو صاف پانی مہیا کیا جاتا ہے.
شارع فیصل، یونیورسٹی روڈ اور طارق روڈ کراچی کی تعمیر
ٹھٹہ اور ٹنڈومحمد خان کو جوڑنے والا جھرک ملاکٹیار میں پاکستان کے سب سے بڑے پونے دوکلومیٹر طویل پل کی تعمیر
نوری آباد پر سومیگاواٹ کے گیس فائر پاور پلانٹ کی تکمیل
کراچی کے جناح اسپتال میں بارہ منزلہ کینسر کے علاج کا مرکز تعمیر کیا جارہا ہے۔۔ علاج بالکل مفت ہوگا
لاڑکانہ میں دل کے امراض کے علاج کے سینٹر کا قیام
سندھ کے چھ کروڑ باشندوں کو جب کوئی حادثہ ہوتا ہے تو خدانخواستہ کسی معذوری یا جان جانے کی صورت میں سندھ حکومت متاثرین کو معاوضہ ادا کرتی ہے۔۔ سندھ میں رہنے والوں کی انشورنس ہے
نواب شاہ میں پاکستان کے پہلے بختاور کیڈٹ کالج کا قیام
ٹھٹہ اور سجاول کے اضلاع کے لیے پیپلزایمبولینس سروس کا قیام
کراچی سرکلر ریلوے پر کام کا آغاز
ٹھٹہ سجاول روڈ پر ایک کلومیٹر طویل فورلین پل کی ریکارڈ مدت میں تعمیر
کراچی کے دواضلاع میں چینی کمپنی کو صفائی کے کام کا ٹھیکہ
لاڑکانہ میں ماڈل اسکول کیڈٹ کالج کا قیام
لاڑکانہ میں گرلز ڈگری کالج کا قیام
لاڑکانہ میں شہید بے نظیر بھٹو لا کالج کا قیام
لاڑکانہ میں گڑھی خدا بخش اسٹیڈیم کا قیام
لاڑکانہ میں ذوالفقارعلی بھٹو ایگری کلچر کالج کا قیام
لاڑکانہ میں قائدعوام انجینرئنگ یونی ورسٹی
لاڑکانہ میں نرسنگ ہاسٹل کا قیام
لاڑکانہ میں شہید شاہ نوازبھٹو لائبریری کا قیام
نوڈیرو میں بے نظیر بھٹو گرلز ڈگری کالج کا قیام
لاڑکانہ میں ٹیکنالوجی کالج کا قیام
لاڑکانہ میں شیرین امیر بیگم بھٹو فلای اور کی تعمیر.
کراچی میں پبلک پرائیوٹ پارٹنرشپ سے کلفٹن فلائی اوور کی تعمیر
بی بی آصفہ ڈینٹل کالج لاڑکانہ
سکھر میں200بیڈ پے مشتمل بینظیرشھید سرجیکل ھسپتال کی تعمیر
سومیگاواٹ تک کے تھر کول پاور پلانٹ کا آغاز
سندھ میں بجلی کی پیداوار کے لیے سات ونڈپاورٹربائن کی تعمیر کی گئی ہے۔۔
سندھ میں انٹرنیٹ پر ٹیکس ختم کردیا گیا۔۔ پہلے یہ ٹیکس ساڑھے انیس فیصد تک تھا
تھر میں موبائل اسپتال کا قیام۔۔
تھر میں چھ لاکھ سے زائد سیاحوں کی ساون میں آمد
کراچی میں جنوبی ایشیا کے سب سے بڑے پانچ سو بستروں اور اٹھارہ آپریشن تھیٹرز پر مشتمل سینٹرلی ائیرکنڈیشنڈ بے نظیر بھٹو ٹراما سینٹر کا قیام
کراچی کے ضلع ملیر میں آئی ٹی سٹی بن رہا ہے
کراچی میں وفاق کے تعاون سے گرین لائن جبکہ بلیو۔۔ گرین۔۔ ریڈ اور ایدھی لائنز کی تعمیر جاری ہے
سندھ میں بجلی کی ترسیل کے لیے سرکاری ٹرانسمیشن اینڈ ڈسپیچ کمپنی کا قیام۔۔۔

کراچی میں 38 کلومیٹر لیاری ایکسپریس وے کی تعمیر
کراچی سے بلوچستان براستہ گوادر ایکسپریس وے کی تعمیر
کراچی کو پینے ک صاف پانی کی فراہمی کے منصوبوں کا کام
پرایمری سے سیکنڈری سکول تک مفت تعلیم
تھر کے عوام کو تھرکول پراجیکٹ کی سالانہ ایک لاکھ کے شیر کی فراھمی
تھر میں خواتین کو با عزت روزگار ک ذرایع فراہم کرنے ک سلسلے میں وزیر اعلی مراد علی شاہ کے خصوصی ھدایت پے تھر کول پراجیکٹ میں ٹرانسپورٹ اور لاجسٹک میں تھر کے خواتین کو بطور ڈرایئور تعیناتی…
سکھر میں آرٹس اینڈ ڈیزائننگ کالج کا قیام
سیہون شریف میں کارپٹ روڈز اور سولر لایٹ کی تنصیب….